Khabren News.com

Be Updated

پاکستانی وزیر اعظم عمران خان امن اور آزادی کے لئے افغان دارالحکومت کابل پہنچے۔

عمران خان کا مغربی ہمسایہ کا سفر اس وقت ہوا جب کابل اور طالبان کے مابین امن مذاکرات ٹھپ ہو چکے ہیں۔

وزیر اعظم کے ہمراہ وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی اور ان کے مشیر تجارت و سرمایہ کاری ، رزاق داؤد بھی ہوں گے۔

افغان صدر غنی نے وزیر اعظم عمران خان کے لئے ریڈ کارپٹ پیش کیا۔
تفصیلات کے مطابق افغان صدارتی محل میں وزیر اعظم عمران خان کی آمد پر استقبالیہ تقریب منعقد کی گئی، صدارتی محل پہنچنے پر افغان صدر اشرف غنی نے وزیر اعظم عمران خان کا استقبال کیا۔

بعد ازاں افغان صدر اشرف غنی اور وزیر اعظم عمران خان میں ون آن ون ملاقات ہوئی۔ ملاقات میں دو طرفہ تعلقات اور افغان امن عمل سمیت باہمی دلچسپی کے امور پر گفتگو ہوئی۔

ملاقات میں پاک افغان تجارت و دیگر باہمی دلچسپی کے امور پر بھی بات چیت ہوئی۔

خیال رہے کہ وزیر اعظم عمران خان افغان صدر کی دعوت پر اپنے پہلے دورہ افغانستان پر کچھ دیر قبل دارالحکومت کابل پہنچے ہیں۔

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی، مشیر تجارت عبد الرزاق داؤد، انٹر سروسز انٹیلی جنس (آئی ایس آئی) کے ڈائریکٹر جنرل فیض حمید اور نمائندہ خصوصی برائے افغانستان محمد صادق بھی وزیر اعظم کے ہمراہ ہیں۔

وزیر اعظم کے دورے کے موقع پر کابل میں سیکیورٹی کے سخت انتظامات کیے گئے ہیں۔

یاد رہے کہ رواں سال ستمبر میں وزیر اعظم عمران خان اور افغان صدر اشرف غنی کے درمیان ٹیلی فونک رابطہ ہوا تھا جس میں پاک افغان تعلقات کو مضبوط بنانے اور افغان امن عمل پر تبادلہ خیال کیا گیا تھا۔

وزیر اعظم نےافغان امن عمل میں پاکستان کی مستقل حمایت کا یقین دلاتے ہوئے کہا تھا کہ مثبت کوششوں سے امریکا طالبان امن معاہدہ اور انٹرا افغان مذاکرات کا آغاز ہوا۔

وزیر اعظم نے دوحہ میں انٹرا افغان مذاکرات شروع کرنے کے اقدامات کی تعریف کی تھی اور جنگ بندی اور تشدد میں کمی کے لیے تمام افغان جماعتوں کے کردار کی اہمیت پر زور دیتے ہوئے کہا تھا کہ تمام افغان اسٹیک ہولڈرز کو تاریخی موقع سے فائدہ اٹھانا چاہیئے

Please follow and like us:

Corona Virus Current Status in Pakistan

Follow all SOP. Keep social distancing, Wear mask